In my eyes…میری نظر میں

is the name of the exhibition ANU is holding.
More here and here.

In case you happen to be in Canberra, do visit the gallery. In case you can’t, here’s my description of this photo:
My two and a half year old son Zulkfil loves to try every bubbler that comes his way, even when water is not his favourite drink at home. In Canberra, he gets quite a few opportunities to do this every time we go out for a stroll along the lake or when we go “kangaroo watching”.
In my humble opinion, this photo reflects what I think of Canberra as a city that I have lived in for the last four years. Some of the words that may describe Canberra are greenery, nature, serenity, and family life.
Canberra gives me that small town feel where everybody knows everybody- well not in a literal sense but through that profound sense of shared space which binds all the Canberrans together.
On a personal side, this city brings in a fair bit of nostalgia as well, reminding me of Islamabad- the Pakistani capital city, of the 1980s. Built from scratch, as much if not more green, and shared by humans and foxes alike, Islamabad would- just like Canberra- transform its character as soon as the sun went down.
This photo was taken at a local park in Canberra with my good old Canon 450D and 55-250mm zoom lens.

نام ہے اس نمائش کا جو اے این یو منعقد کر رہی ہے۔
مزید تفصیل یہاں اوریہاں

اگر آپ کینبرا میں ہیں تو گیلری کا ایک چکر لگا آئیے۔ اگر نہیں تو یہ ہے میرا بیان بارے اس تصویر کے:

میرے اڑھائی سالہ بیٹے ذوالکفل کو پانی کا ہر فوارہ آزمانے کا شوق ہے، گرچہ گھر پر پانی اسکا پسندیدہ مشروب نہیں۔ کینبرا میں اسے ایسے مواقع وافر ملتے ہیں، جب بھی ہم جھیل کنارے چہل قدمی کرنے جائیں یا “کینگرو بینی” کرنے جائیں۔
میری ناقص رائے میں یہ تصویر اس کینبرا سے متعلق، جس میں میں پچھلے چار برس سے رہ رہا ہوں، میری رائے کی اچھی عکاس ہے۔ کچھ الفاظ جو کینبرا کو بیان کر پائیں وہ ہیں سبزہ، فطرت، سکون اور خاندانی زندگی۔
کینبرا مجھے اس چھوٹے قصبے کی مانند لگتا ہے جہاں ہر کوئی ایک دوسرے کو جانتا ہے۔ نہیں حقیقی معنوں میں نہیں لیکن مشترکہ زماں و مکاں کے اس گہرے احساس کیوجہ سے جو اس شہر کے باسیوں کو اکٹھے باندھے رکھتا ہے۔
ذاتی طور پر یہ شہر بہت سی پرانی یادوں کا سبب بھی بنتا ہے کہ یہ مجھے اسی کی دہائی کے اسلام آباد جیسا لگتا ہے۔ نو تعمیر شدہ، اگر زیادہ نہیں تو اتنا ہی سرسبز اور انسانوں اور لومڑیوں کا مشترکہ مسکن اسلام آباد بھی کینبرا کی طرح شام دڈھلتے ہی ایک نیا لبادہ اوڑھ لیا کرتا تھا۔
یہ تصویر کینبرا کے ایک مقامی پارک میں، میں نے اپنے آزمودہ کینن 450 ڈی اور 55-250 ملی میٹر کے عدسے سے لی۔

2 thoughts on “In my eyes…میری نظر میں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s